اپنی شادابیٔ غم کا مجھے اندازہ ہے

intelligent086

Super Star
Nov 10, 2010
5,720
5,726
1,313
Lahore,Pakistan

اپنی شادابیٔ غم کا مجھے اندازہ ہے
روح کا زخم پرانا ہے، مگر تازہ ہے
یہی آشفتہ سری دے گی اسیری سے نجات
سر سلامت سے تو دیوار بھی دروازہ ہے
موت ایک سلسلۂ وہم و گماں، آج کی رات
زندگی ولولۂ عزمِ جواں آج کی رات
کہکشاں پھر سے ہوئی جلوہ فشاں آج کی رات
عالم پیر بھی ہوتا ہے جواں آج کی رات
خونِ تازہ رگِ ہستی میں رواں آج کی رات
وقت کی دست جنوں میں ہے حنا، آج کی رات
مژدۂ دل کہ ہوئے خاک بسر اہلِ ہوس
عشق ہے با علم و طبل و نشاں آج کی رات
اپنی فطرت سے ہے مجبور ہنومان کی قوم
مرغزاروں سے بھی اٹھتا ہے دھواں آج کی رات
ارضِ کشمیر کے جانباز جوانوں کو سلام
رشکِ فردوس ہے وادی کا سماں آج کی رات
سرخرو ملتِ بیضا کو کیا ہے تم نے
محوِ حیرت ہوئیں اقوامِ جہاں آج کی رات
وقت نے دی ہے تمھیں چارہ گری کی مہلت
آج کی رات مسیحا نہ فساں آج کی رات
 
  • Like
Reactions: maria_1
Top
Forgot your password?