رمضان او رخواتین

intelligent086

Active Member
Nov 10, 2010
442
161
1,143
Lahore,Pakistan
رمضان او رخواتین
حدیث قدسی میں اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے: ” انسان کا ہر عمل اس کے لیے ہے سوائے روزے کے، وہ صرف میرے لیے ہے اور میں ہی اس کی جزا دوں گا۔ “ یعنی روزہ رکھنا ایک خاص عمل ہے جو ہم اللہ تعالیٰ کے لیے کرتے ہیں، اس لیے اس کا اہتمام بھی خصوصی ہونا چاہیے۔ مگر افسو س ہے کہ اس معاملے میں ہماری توجہ خصوصی عبادات کے بجائے خصوصی کھانوں پر ہوتی ہے اور خواتین اس میں پیش پیش ہوتی ہیں

اگرچہ خواتین یہ کام نیک جذبے سے کرتی ہیں، مگر انھیں اس بات کا خیال رکھنا چاہیے کہ رمضان درحقیقت نفس کشی کا مہینہ ہے۔وہ ایسے کھانے بنانے کے لیے بھی بہت محنت کرتی ہیں جنھیں بعض اوقات پورے سال میں ایک دفعہ بھی نہیں کھایا جاتا۔ اس کے لیے ان کے دن کا بہت سا وقت مختلف ٹی وی چینلز سے نت نئے کھانوں کی تراکیب اکھٹا کرنے میں گزرتاہے ، وہ روزرنگ برنگے پکوان بنانے کی کوشش کرتی ہیں او ر یوں نہ صرف یہ کہ روزے کے اصل مقصد کو پانے سے محروم ہوتی ہیں بلکہ مال کو مالی عبادت بنانے کے بجائے فضو ل خرچی کاذریعہ بنا ڈالتی ہیں۔ رحمتوںکے اس مہینے میں وہ اللہ کے بجائے روزے داروں کی خوشنودی حاصل کرتی نظر آتی ہیں

سادہ سحر اور افطار کو تووہ اپنی عزت اور وقار کے منافی خیال کرتی ہیں۔ اسی طرح آخری عشرے میں رشتے داروں اور دوستوں کی افطار کا معاملہ آتا ہے تو صرف ناک اونچی رکھنے کے لیے بے حد اسراف سے کام لیتی ہیں اور بچا کچھا کھانا غریبوں میں تقسیم کر دیتی ہیں۔ان کے ہاں غریبوں کے لیے خصوصی افطار کا اہتمام دکھائی نہیں دیتا۔ ایساکیوںہوتا ہے ، ایسا اس لیے ہے کہ وہ یہ بھول جاتی ہیں کہ” روزہ اللہ کے لیے ہے اور وہ ہی اس کی جزا دے گا۔“ لیکن وہ اصل میں اس کی جزا اپنے دوستوںاو ررشتے داروں سے لینا چاہتی ہیں
 
Top
Forgot your password?