سعادتِ ایمان اور آزمائش

intelligent086

Super Star
Nov 10, 2010
5,720
5,726
1,313
Lahore,Pakistan
سعادتِ ایمان اور آزمائش


حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی بعثت مبارکہ کے بعد سب سے پہلے آپ کی تصدیق کا شرف ام المومنین حضرت خدیجہ الکبری رضی اللہ عنہا کو حاصل ہوا، اس کے بعد حضرت ابوبکر صدیق،حضرت علی المرتضیٰ اور حضرت زید بن حارثہ رضی اللہ عنہم اس سعادت سے مشرف ہوئے ان حضرات کے بعد اسلام کی نعمتِ عظمیٰ حضرت عثمان رضی اللہ عنہ کے مقدر میں آئی ۔ اس طرح آپ السابقون الاوّلون میں نمایاں مقام کے حامل ٹھہرے۔

قبولِ اسلام کے بعد انھیں دوسرے مسلمانوں کی طرح ابتلاء اور آلام کے مشکل مرحلوں سے گزرنا پڑا ۔ آپ کے خاندان نے آپ کے قبولِ اسلام کی سخت مخالفت کی اور آپ کو عملاً بھی بڑے جبر وتشد د کا نشانہ بنایا گیا ۔ لیکن آپ کے پائے ثبات میں کوئی لغزش نہیں آئی، اور آپ اپنے موقف پر بڑی استقامت کے ساتھ ڈٹے رہے۔ ’’آپ کے چچا کا یہ معمول تھا کہ جانور کے کچے بدبودار چمڑے میں انہیں لپیٹ کر دھوپ میں ڈال دیتا ۔ نیچے سے تانبے کی طرح تپتی ریت اوپر سے عرب کے سورج کی آتشیں کرنیں ۔ اس پر کچے چمڑے کی بدبو ایک عذاب میں اس بڈھے نے بیسوئوں عذابوں کو یکجا کردیا تھا۔ اس طرح اپنے سگے بھتیجے پر وہ دل کی بھڑاس نکالتا پھر بھی دل سیر نہ ہوتا۔‘‘(ضیاء النبی )

مکہ میں آپ کو حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی دامادی کا شر ف حاصل ہوا۔ بعثت سے قبل حضور کی دوصاحبزادیوں حضرت رقیہ رضی اللہ عنہا اور حضرت ام کلثوم رضی اللہ عنہا کا نکاح ابو لہب کے بیٹوں سے ہوگیا تھا۔ جبکہ رخصتی عمل میںنہیں آئی تھی۔ آپ کی دعوت رسالت کی خبر اس تک پہنچی تو اس نے اپنے بیٹوں کو حکم دیا کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی صاحبزادیوں کو طلاق دے دیں ۔ اس طلاق کے بعد حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنے صاجزادی حضرت رقیہ رضی اللہ عنہاکا نکاح حضرت عثمان غنی سے کردیا۔ کہاجاتا ہے کہ یہ مکہ کا خوبصورت ترین ازدواجی جوڑا تھا اور لوگ ان کے باہمی تعلق پر رشک کیا کرتے تھے۔ خود حضور انور صلی اللہ علیہ وسلم کو اس جوڑے کی روحانی اور جمالیاتی اہمیت کا بڑا احساس تھا ۔ حضرت اسامہ بن زید رضی اللہ عنہ کہتے ہیں حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے مجھے ایک دیگچے میں گوشت دیا اور فرمایا کہ یہ عثمان کے گھر پہنچادو۔ میں ان کے گھر میں داخل ہوا ۔وہاں حضرت رقیہ بھی تشریف فرماتھیں۔ میں نے زوجین میں ان سے بہتر کوئی جوڑا نہیں دیکھا۔ میں کبھی حضرت عثمان کے چہرے کودیکھتا اور کبھی ان کی باوقار اور پرانور اہلیہ کو(اور اس جوڑے کے ملکوتی حسن وتقدس کودیکھ کر حیران ہوتا)جب واپس آئے تو حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے (بڑے اشتیاق سے )مجھ سے پوچھا کیاتم وہاں گئے تھے۔ میں نے عرض کیا : جی ہاں،آپ نے فرمایا: کیا تم نے ان سے اچھا کوئی جوڑا دیکھا ہے میںنے عرض کیا۔ یارسول اللہ نہیں ۔میں کبھی حضرت عثمان کی طرف دیکھتا اور کبھی حضرت رقیہ کی طرف۔(ابن عساکر)بعثت مبارکہ کے پانچویں سال ماہ رجب میں یہ گھرانہ حبشہ کی طرف ہجرت کرگیا۔

 
  • Like
Reactions: maria_1
Top
Forgot your password?