1. This site uses cookies. By continuing to use this site, you are agreeing to our use of cookies. Learn More.

عبداللہ ابن عمر رضی اللہ عنہ

Discussion in 'Islam' started by Sudes, May 4, 2018.

  1. Sudes

    Sudes
    Expand Collapse
    Newbie

    Joined:
    Mar 9, 2018
    Messages:
    18
    Likes Received:
    0


    رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی مبارک مجلس ہے، جلیل القدر صحابہ کرام مثلاَ ابوبکر، عمر، ابو ہریرہ اور انس بن مالک وغیرھم رضی اللہ عنہم اجمعین آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے ارد گرد ہالہ بنائے تشریف فرما ہیں۔

    رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اپنے پیارے صحابہ سے دریافت فرماتے ہیں: “وہ کون سا درخت ہے جس کے (سارے) پتے (خزاں میں بھی) نہیں گرتے؟” مسلمان کی مثال اس درخت جیسی ہے۔

    اولیاء الرحمٰن کی اس مقدس محفل میں خاموشی چھا جاتی ہے۔ صرف ایک لڑکا ایسا ہے جس کے دل میں خیال گزرتا ہے کہ یہ کھجور کا درخت ہے مگر وہ اپنی کم سنی کی وجہ سے اور بڑوں کا ادب کرتے ہوئے حیا کے سبب خاموش رہتا ہے۔ آخرکار نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے جانباز ساتھی آپ سے پوچھتے ہیں آپ صلی اللہ علیہ وسلم ہی بتادیں کہ یہ کون سا درخت ہے؟ خاتم النبین صلی اللہ علیہ وسلم کی کوثر و تسنیم سے دھلی ہوئی زبان سے موتی بکھرتے ہیں:” یہ “کھجور کا درخت ہے۔

    بعد میں یہ ہونہار لڑکا اپنے عظیم المرتبت والد کو ساری بات بتا دیتا ہے۔ اسکا مجاہد باپ فرماتا ہے: اگر تو یہ کہہ دیتا کہ یہ کھجور کا درخت ہے تو مجھے فلاں فلاں چیز سے زیادہ محبوب ہوتا صحیح بخاری: 6144، صحیح مسلم 2811

    یہ عظیم الشان لڑکا تاریخ اسلام میں سیدنا عبداللہ بن عمر (رضی اللہ عنہ) کے نام سے مشہور ہے۔ آپ کی کنیت ابو عبدالرحمٰن ہے۔ آپ کی سخاوت ظرب المثل تھی۔

    ایک دفعہ آپ نے کہا: میرا دل آج مچھلی کھانے کا ہے۔ آپ کے گھر والوں نے مچھلی پکا کر تیار کی اور آپ کے سامنے رکھ دی، اتنے میں ایک سائل آیا۔ آپ نے وہ مچھلی اسے دے دی۔ الطبقات الکبری لابن سعد 108/4 واسنادہ صحیح

    میمون بن مہران سے روایت ہے کہ ابن عمر رضی اللہ عنہ کی بیوی کو لوگوں نے برا بھلا کہا کہ تم ان کی خدمت صحیح کیوں نہیں کرتی؟ وہ کہنے لگی: میں کیا کروں، ان کے لیے جو کھانا تیار کیا جاتا ہے وہ اپنے ساتھ دوسروں کو بھی کھلاتے ہیں۔ اس کے بعد آپ کی بیوی نے ان مسکینوں کو جو راستہ میں بیٹھے تھے بلا بھیجا اور انہیں کھانا کھلا کر کہا: آج آپ لوگ اُن کے راستہ میں نے بیٹھیں، اور دوسرے مسکینوں کے گھر پہلے ہی کھانا بھیج دیا اور کہہ دیا کہ: تمہں اگر ابن عمر بلائیں تو نہ آنا۔ اتنے میں ابن عمر رضی اللہ عنہ تشریف لائے اور مسکینوں کو بلایا تو وہ نہ آئے۔ آپ رضی اللہ عنہ نے اپنی بیوی سے فرمایا: کیا تمہارا یہ ارادہ ہے کہ میں آج رات کا کھانا نہ کھاوں؟ اس کے بعد آپ نے اس رات کھانا نہ کھایا۔ ابن سعد 166/4 واسناہ صحیح

    آپ عشاء کا کھانا اکیلے نہ کھاتے ابن سعد 158/4 و اسنادہ صحیح

    ایک دفعہ آپ بیمار تھے۔ آپ کے لئے انگور خریدے گئے۔ اتنے میں ایک سائل آیا تو آپ نے وہ انگور اسے دے دئیے۔ ابن سعد 185/4 واسناد صحیح

    آپ کو جو چیز زیادہ پسند ہوتی اس کو اللہ کی راہ میں دے دیتے۔ حلیۃ الاولیاء: 295/1 اسناد صحیح

    امام مالک رحمہ اللہ نے کہا: آپ رضی اللہ عنہ آئمہ دین میں سے تھے۔ المعرفۃ و التاریخ 491/1

    یہ مضمون توحید ڈاٹ کام سے لیا گیا ہے۔
     

Share This Page