ہیپاٹائٹس ’سی‘ کے ساتھ زندگی

intelligent086

TM Star
Nov 10, 2010
1,663
1,591
1,213
Lahore,Pakistan
ہیپاٹائٹس ’سی‘ کے ساتھ زندگی
114592


ڈاکٹر ڈینئل مورل


اگر کسی کو ہیپاٹائٹس سی ہو جائے تو اس کے لیے زندگی گزارنا ایک چیلنج بن جاتا ہے۔ البتہ اس مرض کے وائرس کو حد میں رکھا جا سکتا ہے اور پرُمسرت اور فعال زندگی گزاری جا سکتی ہے۔ اس میں جگر کی صحت کا خیال رکھنا، مناسب خوراک کھانا اور دباؤ سے بچنا شامل ہیں۔ ہیپاٹائٹس سی کے ساتھ بہتر زندگی گزارنے کے لیے مندرجہ ذیل اقدامات کیے جا سکتے ہیں۔ پیچیدگی سے بچنا:ہیپاٹائٹس سی میں مبتلا لوگوں کے لیے جگر سب سے بڑی تشویش ہوتی ہے۔ ہیپاٹائٹس سی جگر میں سوزش اور سوجن پیدا کر سکتا ہے۔ سوزش سے بالآخر جگر کو نقصان پہنچتا ہے۔ اس حالت کو سیروسس کہا جاتا ہے جس میں جگر کی صحت مند بافتوں کی جگہ دوسری لے لیتی ہیں۔ اس صورت حال میں الکحل اور نشہ آور ادویات سے پرہیز کرنا چاہیے۔ وزن کو مناسب حد میں رکھنا چاہیے۔ زیادہ تر دنوں میں ورزش کرنی چاہیے۔ کم چکنائی اور زیادہ ریشے والی غذائیں کھانی چاہئیں جن میں پھل، سبزیاں اور ہول گرینز زیادہ ہوں۔ ٹراز فیٹس اور سیچوریٹڈ فیٹس والی غذاؤں کو کم کھانا چاہیے۔ وٹامن یا سپلی منٹ کھانے سے قبل ڈاکٹر سے رجوع کرنا چاہیے۔ مناسب وزن: شاید آپ کا خیال ہو کہ وزن کا جگر سے کوئی تعلق نہیں، لیکن زیادہ وزن سے جگر پر چربی جمع ہو جاتی ہے۔ چربی والے جگر میں سیروسس کا امکان بڑھ جاتا ہے۔ اگر وزن زیادہ ہو تو جگر کی بعض ادویات بھی اثر نہیں کرتیں۔ اگر آپ کا وزن زیادہ ہے تو کھانے کا صحت بخش منصوبہ ترتیب دیں اور باقاعدگی سے ورزش کریں۔ ماہرین درمیانی مشقت والی کم از کم 30 منٹ کی ورزش ہفتے کے پانچ دن تجویز کرتے ہیں۔ درمیانی مشقت والی ورزشوں میں شامل ہیں؛ تیز چہل قدمی، ہاتھ سے چلنے والی مشین کے ذریعے لان کا گھاس کاٹنا۔ تیراکی اور بائیسکل چلانا۔ متوازن اور صحت بخش غذا: ہیپاٹائٹس سی کے شکار افراد کے لیے کوئی مخصوص غذا نہیں تجویز نہیں کی جاتی۔ تاہم اچھی اور متوازن غذا وزن کو حد میں رکھنے اور ہیپاٹائٹس سی کی پیچیدگیاں گھٹانے کی موجب ہوتی ہے۔ اس میں مبتلا افراد کے لیے غذا کے استعمال کی عمومی گائیڈ لائنز یہ ہیں؛ ہول گرین سے تیار کردہ اشیا جیسے سیریل اور روٹ

روٹی کھائیں۔ مختلف رنگوں کے پھل اور سبزیاں کھائیں اور زیادہ کھائیں۔ پراسسڈ اور ٹرانز فیٹس والی غذاؤں سے پرہیز کریں۔ اسی طرح چکنائی، میٹھے اور نمک سے دور رہیں۔ غذائی پلان ایسا منتخب کریں جس پر آپ زیادہ عرصہ عمل کر سکیں۔ جب آپ 80 فیصد سیر ہو جائیں تو کھانا چھوڑ دیں۔ تین اور چار گھنٹوں کے وقفے سے تھوڑی تھوڑی مقدار میں کھانا کھائیں تاکہ توانائی برقرار رہے۔ نشے سے گریز: الکحل جگر کے خلیوں کو نقصان پہنچاتی ہے۔ ہیپاٹائٹس سی کی صورت میں یہ نقصان بڑھ سکتا ہے۔ تحقیقات سے معلوم ہوا ہے کہ ہیپاٹائٹس سی کے ساتھ الکحل استعمال کرنے والوں کو سیروسس اور جگر کے سرطان کا خطرہ زیادہ ہوتا ہے۔ تھکاوٹ سے نپٹنا:ہیپاٹائٹس سی کی علامات میں تھکاوٹ ہونا عام ہے۔ اگر تھکاوٹ محسوس ہو تو یہ کریں؛ دن کے وقت تھوڑی دیر سو لیں۔ ایک دن میں بہت زیادہ سرگرمیوں کا منصوبہ نہ بنائیں بلکہ انہیں پورے ہفتے پر پھیلا دیں۔ اگر آپ کا کام تھکا دینے والا ہے تو وقفوں سے کام کریں۔ دباؤ سے نپٹنا: ہیپاٹائٹس سی میں مبتلا ہونے کی تشخیص کے بعد فرد دباؤ میں آ جاتا ہے۔ ذہنی دباؤ سے نپٹنا بھی ہیپاٹائٹس سی کو حد میں رکھنے کے لیے اہم ہے۔ مختلف لوگ ذہنی دباؤ سے مختلف انداز سے نپٹتے ہیں۔ ان طریقوں میں شامل ہیں؛ روزانہ کم از کم 15 منٹ ورزش کرنا۔ اس میں چہل قدمی، دوڑ، رقص، بائیسکل چلانا، گولف، تیراکی، باغبانی یا یوگا شامل ہیں۔ اگر ممکن ہو تو ذہنی دباؤ پر قابو پانے کی تربیتی کلاسز میں شریک ہوں۔ روزانہ سرانجام دیے جانے والے امور کی حد مقرر کریں، اور زیادہ کاموں کو ’’نہ‘ ‘کہیں۔ ان لوگوں سے گریز کریں جو ذہنی دباؤ کا سبب بنتے ہیں۔ اپنے کاموں کے لیے دوسروں کی معاونت بھی حاصل کریں۔ ہیپاٹائٹس سی کے ساتھ زندگی گزارنے کا ڈھنگ سیکھ کر اپنی صحت اور فلاح کو اپنے ہاتھ میں لیا جا سکتا ہے۔ (ترجمہ : رضوان عطا)
 

maria_1

Senior Member
Jul 7, 2019
601
481
63
ہیپاٹائٹس ’سی‘ کے ساتھ زندگی
View attachment 114592

ڈاکٹر ڈینئل مورل


اگر کسی کو ہیپاٹائٹس سی ہو جائے تو اس کے لیے زندگی گزارنا ایک چیلنج بن جاتا ہے۔ البتہ اس مرض کے وائرس کو حد میں رکھا جا سکتا ہے اور پرُمسرت اور فعال زندگی گزاری جا سکتی ہے۔ اس میں جگر کی صحت کا خیال رکھنا، مناسب خوراک کھانا اور دباؤ سے بچنا شامل ہیں۔ ہیپاٹائٹس سی کے ساتھ بہتر زندگی گزارنے کے لیے مندرجہ ذیل اقدامات کیے جا سکتے ہیں۔ پیچیدگی سے بچنا:ہیپاٹائٹس سی میں مبتلا لوگوں کے لیے جگر سب سے بڑی تشویش ہوتی ہے۔ ہیپاٹائٹس سی جگر میں سوزش اور سوجن پیدا کر سکتا ہے۔ سوزش سے بالآخر جگر کو نقصان پہنچتا ہے۔ اس حالت کو سیروسس کہا جاتا ہے جس میں جگر کی صحت مند بافتوں کی جگہ دوسری لے لیتی ہیں۔ اس صورت حال میں الکحل اور نشہ آور ادویات سے پرہیز کرنا چاہیے۔ وزن کو مناسب حد میں رکھنا چاہیے۔ زیادہ تر دنوں میں ورزش کرنی چاہیے۔ کم چکنائی اور زیادہ ریشے والی غذائیں کھانی چاہئیں جن میں پھل، سبزیاں اور ہول گرینز زیادہ ہوں۔ ٹراز فیٹس اور سیچوریٹڈ فیٹس والی غذاؤں کو کم کھانا چاہیے۔ وٹامن یا سپلی منٹ کھانے سے قبل ڈاکٹر سے رجوع کرنا چاہیے۔ مناسب وزن: شاید آپ کا خیال ہو کہ وزن کا جگر سے کوئی تعلق نہیں، لیکن زیادہ وزن سے جگر پر چربی جمع ہو جاتی ہے۔ چربی والے جگر میں سیروسس کا امکان بڑھ جاتا ہے۔ اگر وزن زیادہ ہو تو جگر کی بعض ادویات بھی اثر نہیں کرتیں۔ اگر آپ کا وزن زیادہ ہے تو کھانے کا صحت بخش منصوبہ ترتیب دیں اور باقاعدگی سے ورزش کریں۔ ماہرین درمیانی مشقت والی کم از کم 30 منٹ کی ورزش ہفتے کے پانچ دن تجویز کرتے ہیں۔ درمیانی مشقت والی ورزشوں میں شامل ہیں؛ تیز چہل قدمی، ہاتھ سے چلنے والی مشین کے ذریعے لان کا گھاس کاٹنا۔ تیراکی اور بائیسکل چلانا۔ متوازن اور صحت بخش غذا: ہیپاٹائٹس سی کے شکار افراد کے لیے کوئی مخصوص غذا نہیں تجویز نہیں کی جاتی۔ تاہم اچھی اور متوازن غذا وزن کو حد میں رکھنے اور ہیپاٹائٹس سی کی پیچیدگیاں گھٹانے کی موجب ہوتی ہے۔ اس میں مبتلا افراد کے لیے غذا کے استعمال کی عمومی گائیڈ لائنز یہ ہیں؛ ہول گرین سے تیار کردہ اشیا جیسے سیریل اور روٹ

روٹی کھائیں۔ مختلف رنگوں کے پھل اور سبزیاں کھائیں اور زیادہ کھائیں۔ پراسسڈ اور ٹرانز فیٹس والی غذاؤں سے پرہیز کریں۔ اسی طرح چکنائی، میٹھے اور نمک سے دور رہیں۔ غذائی پلان ایسا منتخب کریں جس پر آپ زیادہ عرصہ عمل کر سکیں۔ جب آپ 80 فیصد سیر ہو جائیں تو کھانا چھوڑ دیں۔ تین اور چار گھنٹوں کے وقفے سے تھوڑی تھوڑی مقدار میں کھانا کھائیں تاکہ توانائی برقرار رہے۔ نشے سے گریز: الکحل جگر کے خلیوں کو نقصان پہنچاتی ہے۔ ہیپاٹائٹس سی کی صورت میں یہ نقصان بڑھ سکتا ہے۔ تحقیقات سے معلوم ہوا ہے کہ ہیپاٹائٹس سی کے ساتھ الکحل استعمال کرنے والوں کو سیروسس اور جگر کے سرطان کا خطرہ زیادہ ہوتا ہے۔ تھکاوٹ سے نپٹنا:ہیپاٹائٹس سی کی علامات میں تھکاوٹ ہونا عام ہے۔ اگر تھکاوٹ محسوس ہو تو یہ کریں؛ دن کے وقت تھوڑی دیر سو لیں۔ ایک دن میں بہت زیادہ سرگرمیوں کا منصوبہ نہ بنائیں بلکہ انہیں پورے ہفتے پر پھیلا دیں۔ اگر آپ کا کام تھکا دینے والا ہے تو وقفوں سے کام کریں۔ دباؤ سے نپٹنا: ہیپاٹائٹس سی میں مبتلا ہونے کی تشخیص کے بعد فرد دباؤ میں آ جاتا ہے۔ ذہنی دباؤ سے نپٹنا بھی ہیپاٹائٹس سی کو حد میں رکھنے کے لیے اہم ہے۔ مختلف لوگ ذہنی دباؤ سے مختلف انداز سے نپٹتے ہیں۔ ان طریقوں میں شامل ہیں؛ روزانہ کم از کم 15 منٹ ورزش کرنا۔ اس میں چہل قدمی، دوڑ، رقص، بائیسکل چلانا، گولف، تیراکی، باغبانی یا یوگا شامل ہیں۔ اگر ممکن ہو تو ذہنی دباؤ پر قابو پانے کی تربیتی کلاسز میں شریک ہوں۔ روزانہ سرانجام دیے جانے والے امور کی حد مقرر کریں، اور زیادہ کاموں کو ’’نہ‘ ‘کہیں۔ ان لوگوں سے گریز کریں جو ذہنی دباؤ کا سبب بنتے ہیں۔ اپنے کاموں کے لیے دوسروں کی معاونت بھی حاصل کریں۔ ہیپاٹائٹس سی کے ساتھ زندگی گزارنے کا ڈھنگ سیکھ کر اپنی صحت اور فلاح کو اپنے ہاتھ میں لیا جا سکتا ہے۔ (ترجمہ : رضوان عطا)

Informative and useful sharing
 
  • Like
Reactions: intelligent086

Shiraz-Khan

Alhamdulillahi Rabbil 3aalameen
Super Moderator
Oct 27, 2012
18,692
16,070
1,113
ہیپاٹائٹس ’سی‘ کے ساتھ زندگی
View attachment 114592

ڈاکٹر ڈینئل مورل


اگر کسی کو ہیپاٹائٹس سی ہو جائے تو اس کے لیے زندگی گزارنا ایک چیلنج بن جاتا ہے۔ البتہ اس مرض کے وائرس کو حد میں رکھا جا سکتا ہے اور پرُمسرت اور فعال زندگی گزاری جا سکتی ہے۔ اس میں جگر کی صحت کا خیال رکھنا، مناسب خوراک کھانا اور دباؤ سے بچنا شامل ہیں۔ ہیپاٹائٹس سی کے ساتھ بہتر زندگی گزارنے کے لیے مندرجہ ذیل اقدامات کیے جا سکتے ہیں۔ پیچیدگی سے بچنا:ہیپاٹائٹس سی میں مبتلا لوگوں کے لیے جگر سب سے بڑی تشویش ہوتی ہے۔ ہیپاٹائٹس سی جگر میں سوزش اور سوجن پیدا کر سکتا ہے۔ سوزش سے بالآخر جگر کو نقصان پہنچتا ہے۔ اس حالت کو سیروسس کہا جاتا ہے جس میں جگر کی صحت مند بافتوں کی جگہ دوسری لے لیتی ہیں۔ اس صورت حال میں الکحل اور نشہ آور ادویات سے پرہیز کرنا چاہیے۔ وزن کو مناسب حد میں رکھنا چاہیے۔ زیادہ تر دنوں میں ورزش کرنی چاہیے۔ کم چکنائی اور زیادہ ریشے والی غذائیں کھانی چاہئیں جن میں پھل، سبزیاں اور ہول گرینز زیادہ ہوں۔ ٹراز فیٹس اور سیچوریٹڈ فیٹس والی غذاؤں کو کم کھانا چاہیے۔ وٹامن یا سپلی منٹ کھانے سے قبل ڈاکٹر سے رجوع کرنا چاہیے۔ مناسب وزن: شاید آپ کا خیال ہو کہ وزن کا جگر سے کوئی تعلق نہیں، لیکن زیادہ وزن سے جگر پر چربی جمع ہو جاتی ہے۔ چربی والے جگر میں سیروسس کا امکان بڑھ جاتا ہے۔ اگر وزن زیادہ ہو تو جگر کی بعض ادویات بھی اثر نہیں کرتیں۔ اگر آپ کا وزن زیادہ ہے تو کھانے کا صحت بخش منصوبہ ترتیب دیں اور باقاعدگی سے ورزش کریں۔ ماہرین درمیانی مشقت والی کم از کم 30 منٹ کی ورزش ہفتے کے پانچ دن تجویز کرتے ہیں۔ درمیانی مشقت والی ورزشوں میں شامل ہیں؛ تیز چہل قدمی، ہاتھ سے چلنے والی مشین کے ذریعے لان کا گھاس کاٹنا۔ تیراکی اور بائیسکل چلانا۔ متوازن اور صحت بخش غذا: ہیپاٹائٹس سی کے شکار افراد کے لیے کوئی مخصوص غذا نہیں تجویز نہیں کی جاتی۔ تاہم اچھی اور متوازن غذا وزن کو حد میں رکھنے اور ہیپاٹائٹس سی کی پیچیدگیاں گھٹانے کی موجب ہوتی ہے۔ اس میں مبتلا افراد کے لیے غذا کے استعمال کی عمومی گائیڈ لائنز یہ ہیں؛ ہول گرین سے تیار کردہ اشیا جیسے سیریل اور روٹ

روٹی کھائیں۔ مختلف رنگوں کے پھل اور سبزیاں کھائیں اور زیادہ کھائیں۔ پراسسڈ اور ٹرانز فیٹس والی غذاؤں سے پرہیز کریں۔ اسی طرح چکنائی، میٹھے اور نمک سے دور رہیں۔ غذائی پلان ایسا منتخب کریں جس پر آپ زیادہ عرصہ عمل کر سکیں۔ جب آپ 80 فیصد سیر ہو جائیں تو کھانا چھوڑ دیں۔ تین اور چار گھنٹوں کے وقفے سے تھوڑی تھوڑی مقدار میں کھانا کھائیں تاکہ توانائی برقرار رہے۔ نشے سے گریز: الکحل جگر کے خلیوں کو نقصان پہنچاتی ہے۔ ہیپاٹائٹس سی کی صورت میں یہ نقصان بڑھ سکتا ہے۔ تحقیقات سے معلوم ہوا ہے کہ ہیپاٹائٹس سی کے ساتھ الکحل استعمال کرنے والوں کو سیروسس اور جگر کے سرطان کا خطرہ زیادہ ہوتا ہے۔ تھکاوٹ سے نپٹنا:ہیپاٹائٹس سی کی علامات میں تھکاوٹ ہونا عام ہے۔ اگر تھکاوٹ محسوس ہو تو یہ کریں؛ دن کے وقت تھوڑی دیر سو لیں۔ ایک دن میں بہت زیادہ سرگرمیوں کا منصوبہ نہ بنائیں بلکہ انہیں پورے ہفتے پر پھیلا دیں۔ اگر آپ کا کام تھکا دینے والا ہے تو وقفوں سے کام کریں۔ دباؤ سے نپٹنا: ہیپاٹائٹس سی میں مبتلا ہونے کی تشخیص کے بعد فرد دباؤ میں آ جاتا ہے۔ ذہنی دباؤ سے نپٹنا بھی ہیپاٹائٹس سی کو حد میں رکھنے کے لیے اہم ہے۔ مختلف لوگ ذہنی دباؤ سے مختلف انداز سے نپٹتے ہیں۔ ان طریقوں میں شامل ہیں؛ روزانہ کم از کم 15 منٹ ورزش کرنا۔ اس میں چہل قدمی، دوڑ، رقص، بائیسکل چلانا، گولف، تیراکی، باغبانی یا یوگا شامل ہیں۔ اگر ممکن ہو تو ذہنی دباؤ پر قابو پانے کی تربیتی کلاسز میں شریک ہوں۔ روزانہ سرانجام دیے جانے والے امور کی حد مقرر کریں، اور زیادہ کاموں کو ’’نہ‘ ‘کہیں۔ ان لوگوں سے گریز کریں جو ذہنی دباؤ کا سبب بنتے ہیں۔ اپنے کاموں کے لیے دوسروں کی معاونت بھی حاصل کریں۔ ہیپاٹائٹس سی کے ساتھ زندگی گزارنے کا ڈھنگ سیکھ کر اپنی صحت اور فلاح کو اپنے ہاتھ میں لیا جا سکتا ہے۔ (ترجمہ : رضوان عطا)

informative
thnx for sharing :)
 
  • Like
Reactions: intelligent086
Top
Forgot your password?