یثرب سے مدینہ

intelligent086

Super Star
Nov 10, 2010
5,720
5,726
1,313
Lahore,Pakistan
یثرب سے مدینہ
مدینہ منورہ جس کا قدیم نام یثرب تھا ۔اسے غالب روایات کے مطابق اسے حضرت نوح علیہ السلام کی اولاد میں سے قوم عالقہ نے سب سے پہلے آبادکیا،پھریہود کی آمد ہوئی، وہ صدیوں تک اسی علاقہ پر قابض رہے اور یہاں کے جملہ زمینی وسائل کھیتیاں ، باغات کے ساتھ ساتھ تجارتی منڈیوں پر بھی ان کا تسلّط تھا۔ اس کے ساتھ ساتھ اہل کتا ب ہونے کی وجہ سے لوگ ان کے علم وفضل کو بھی تسلیم کرتے تھے،اور یہود اپنی روایت کے مطابق اپنے علم اور وسائل سے ہر طرح کا مفاد حاصل کرتے۔ اوس وخزرج بنو قحطان سے تھے جو پہلے یمن میں آباد تھے۔ جب وہاں کے حالات خراب ہوئے تو ان جد اعلیٰ عمر و بن عامر نے وہاں سے نقل مکانی کا فیصلہ کیا۔ اس کی اولاد عر ب کے متعلق علاقوں میں آبا د ہوگئی ۔ اوس اور خزرج سگے بھائی تھے۔ ان کے والد کا نام حارثہ بن ثعلبہ بن عمر و بن عامر تھا۔ ’’یمن میں آباد تمام قبائل کا جد اعلیٰ ’’قحطان‘‘تھا۔علماء لغت وتاریخ کی رائے یہ ے کہ سب سے پہلے جس نے عربی زبان میں گفتگو کی وہ یہی قحطان تھا۔ اس کی اولاد کو العرب المتعرِبہ کہاجاتا ہے۔ یعنی وہ لوگ جن کی مادری زبان عربی تھی۔ حضرت اسماعیل علیہ السلام کی اولاد کو ’’العرب المستعرِبہ ‘‘ کہاجاتا ہے۔ کیونکہ ان کی زبان عربی نہیں تھی۔ انہوں نے بنو جرھم سے یہ زبان سیکھی ۔ عربوں کی ایک تیسری قسم ہے ۔جنہیں ’’العرب العاربہ‘‘کہاجاتا ہے۔ اس سے مراد عاد، ثمود ، طسم ،جدیس، عملیق وغیر ہ ،قبائل میں جن کی نسلیں منقطع ہوچکی ہیں۔لیکن علم انساب کے کچھ ماہرین کی یہ رائے بھی ہے کہ ’’قحطان‘‘بھی حضرت اسماعیل علیہ السلام کی اولاد سے ہیں۔ اوس اور خزرج کی زیادہ تر اولاد یثرب اور اس کے مضا فات میں آباد ہوئی ۔ رفتہ رفتہ ان کی تعدادمیں بھی اضافہ ہوتا گیا۔ شروع میں یہود اور بنو قحطان کے درمیان دوستی اور تعاون کا معاہدہ رہا ،لیکن ان کی بڑھتی ہوئی تعداد سے خائف ہوکر یہود نے معاہدہ توڑ دیا۔ خوف اور بے یقینی کے اس فضاء میں بنو قحطان میں ایک نامور فرزند مالک بن عجلان پیدا ہوا۔اس نے اپنی بکھری ہوئی قوم کی شیرازہ بندی کی ،دونوں قبیلوں نے اسے اپنا سردار تسلیم کر لیا،اور جلد ہی اوس وخزرج یہودیوں سے زیادہ طاقت ور ہوگئے۔ یہودیوں نے جب یہ دیکھا کہ اب وہ میدان جنگ میں ان قبیلوں کو شکست نہیں دے سکتے تو انھوں کی سازش کے روایتی ہتھکنڈے استعمال کرنے شروع کیے۔ دونوں قبائل کے درمیان نفرت کے بیج بونے شروع کردیے،اور کچھ ہی دیر بعد اوس اورخزرج میں دشمنی شروع ہوگئی جو پہلی صدی عیسوی سے چھٹی صد ی عیسوی تک جا ری رہی۔ واقعہ ہجرت سے چار پانچ سال پہلے اوس وخزرج میں ایک لرزہ خیز خونی جنگ ہوئی جسے جنگ بغاث کہا جاتا ہے۔ بہت نقصان اٹھا نے کے بعد دونوں قبائل کو احساس ہوا کہ صلح ہونی چاہیے، اور کسی ایک شخص کی سربراہی پر متفق ہونا چاہیے۔ دو افراد کے نام سامنے آئے ۔عبداللہ بن ابی اور ابو عامر راہب۔ عبداللہ بن ابی کے نام پر اتفاق ہوگیا۔ اس تاج پوشی کی تیاری ہو ہی رہی تھی کہ ’’یثرب ‘‘کا نصیبہ جاگ اٹھا اور ان کا رابطہ حضور رحمۃ للعالمین صلی اللہ علیہ وسلم سے ہوگیااور یثرب جلدہی ’’مدینۃ النبی‘‘بن گیا۔
 
  • Like
Reactions: maria_1
Top
Forgot your password?