Nazmein ( Only In Urdu Font ).........!!!

pErIsH_BoY

Active Member
Jan 28, 2014
287
97
28
Lahore
salam...
Tamam Ehl-e-zaok Ehbaab se guzarish hai keh...es section me sirf wohi Nazme'n share ki jain jo sirf aur sirf Urdu Font me hon.
shukriya


pErIsH_BoY
 
  • Like
Reactions: whiteros

pErIsH_BoY

Active Member
Jan 28, 2014
287
97
28
Lahore
!*!*!*!*!*!*!*!*!*!*!*!*!*!*!*!*!

میں خواب بہت دیکھتا ہوں

ایسے خواب!

جن میں کوئی دکھ‘ کوئی پریشانی نہیں ہوتی

جن میں وصل کے رستے ہجر کی وادی سے ہو کر نہیں گزرتے

جن میں محبت ہمیشہ ادھ کھلے پھول کی طرح خوبصورت

اور بچے کی مسکان کی طرح پاکیزہ ہوتی ہے

ایسے خواب!

جہاں ایک مسکراہٹ کی قیمت ہزار آنسو نہیں ہوتے

میری پلکوں کی شاخوں پر کئی ایسے خواب بیٹھے رہتے ہیں

اُن کی گنگناہٹ مجھے جینے پہ اکساتی ہے

نئے راستوں کی اور لے کر چلتی ہے

نئی منزلوں کا پتا بتاتی ہے

مجھے اپنے خوابوں سے محبت ہے

اُن خوابوں میں رہنے والے ایک ایک شخص سے محبت ہے

اُن خوابوں میں دِکھنے والی ایک ایک شئے سے محبت ہے

کہ یہ سب میرا ہے‘ صرف میرا

میرے خواب میرے علاوہ کوئی نہیں دیکھ سکتا

جب تک کہ میں نہ انہیں دکھانا چاہوں

کوئی انہیں میری آنکھوں سے چرا نہیں سکتا

جب تک کہ میں خود نہ کسی کی آنکھوں میں سجا دوں

میرے خوابو!

آج میں یہ اقرار کرتا ہوں!

کہ میں تم میں زندہ ہوں

یہ سچ ہے کہ مجھے اِن آنسوؤں سے ڈر نہیں لگتا

مگر پھر بھی میں شاید اِس لئے رونے سے ڈرتا ہوں

کہ اِن آنکھوں میں تم رہتے ہو

تمہارا ہونا میرا ہونا ہے

اور میں تمہیں کھونے سے ڈرتا ہوں

!*!*!*!*!*!*!*!*!*!*!*!*!*!*!*!*!
 
  • Like
Reactions: Guriya_Rani

pErIsH_BoY

Active Member
Jan 28, 2014
287
97
28
Lahore

شام اُسے بتانا۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔

اے شام اُسے بتانا
سراب اُس کی جستجو کے
نصاب اُس کی آرزو کے
چار سو بکھرے ہوئے ہیں
کسک رُتوں کی داستانیں
ہر لفظ میں بند ہیں
میری آنکھیں سائے کی مانند چُپ ہیں
مگر ان میں بسا انتظار
اب بھی زندہ ہے
اے شام اُسے بتانا
اُسے اپنے اندر زندہ رکھتے رکھتے
میرے سارے جذبے جھلس گئے ہیں
پاسِ وفا کے بھرم میں
میرا سکوں جل چکا ہے
میری آنکھوں میں بس
راکھ ہی راکھ ہے
جن میں پر لمحہ
اُس کی محبت کی چنگاری
بھڑکتی رہتی ہے
اےشام اُسے بتانا
پہلے بھی پانیوں میں رہتے تھے
اب بھی سمندر میں گھر بنایا ہے
ڈوبتے سورج کی زرد روشنی سے
خود کو اضطراب کے سنگھار سے سجایا ہے
ڈھلتی شام سے لے کر
ڈھلتی شام تک
لہو نے اُسی کا ریاض کیا ہے
جس سے
میری خلوتیں ، میری جلوتیں
ہر گھڑی آباد ہیں
اے شام اُس سے پوچھنا
کیا میری ساری راتیں
فراق کی رُت میں بسر ہوں گی؟
اور مجھے نتانا کہ
میں خود کو کیسے سمجھاؤں
کہ ادھوری خواہش
ہونٹوں کو خشک
اور آنکھوں کو نم رکھتی ہے

اے شام اُسے بتانا
کہ اس برباد ، گیلے نگر میں
میں ہی نہیں
وہ بھی رہتا ہے

اُس سے کہنا

کہ میرے اندر وہ اس طرح ہے
جس طرح عشامیں وتر
میرے ساتھ ساتھ بھی
مجھ سے جدا بھی
اے شام اُسے بتانا ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔​

 
  • Like
Reactions: Guriya_Rani

pErIsH_BoY

Active Member
Jan 28, 2014
287
97
28
Lahore
یہ شیشے یہ سپنے یہ رشتے یہ دھاگے

یہ شیشے یہ سپنے یہ رشتے یہ دھاگے

کسے کیا خبر ہے کہاں ٹوٹ جائیں

محبت کے دریا میں تنکے وفا کے

نہ جانے یہ کس موڑ پر ڈوب جائیں


عجب دل کی بستی عجب دل کی وادی
ہر اک موڑ موسم نئی خواہشوں کا



لگائے ہیں ہم نے بھی سپنوں کے پودے

مگر کیا بھروسہ یہاں بارشوں کا


مرادوں کی منزل کے سپنوں میں کھوئے

محبت کی راہوں پہ ہم چل پڑے تھے

ذرا دور چل کے جب آنکھیں کھلیں تو

کڑی دھوپ میں ہم اکیلے کھڑے تھے


جنہیں دل سے چاہا جنہیں دل سے پوجا

نظر آرہے ہیں وہی اجنبی سے

روایت ہے شاید یہ صدیوں پرانی

شکایت نہیں ہے کوئی زندگی سے


سدرشن فاکر
 
  • Like
Reactions: Guriya_Rani

pErIsH_BoY

Active Member
Jan 28, 2014
287
97
28
Lahore
میرے ہم سفر، میرے ہم نشین۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے رب سے مانگا تو کچھ نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پر جب بھی مانگی کوئی دعا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں مانگا کچھ بھی تیرے سوا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ طلب کیا کے میرے خدا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نئے عہد کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سبھی راحتیں، سبھی چاہتیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ عطا کرے تجھے منزلیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ طلب کیا کہ میرے خدا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تجھے بخت دے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تجھے تاج دے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تجھے تخت دے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے ہمسفر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے چارہ گر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ ہے محبت کا کٹھن سفر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے ساتھ چلنا ذرا سوچ کر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے پاس زر نہ کوئی ہنر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پھر بھی دیکھ تو میرا حوصلہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے پاس جو کچھ سبھی تیرا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں اور کچھ بھی تیرے سوا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری دوستی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری زندگی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری خاموشی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری بے بسی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری صبح بھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری شام بھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرا علم بھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرا نام بھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہ جو مل سکیں میرے دام بھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ سبھی کچھ تجھ کو عطا کرے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے چارہ گر تو یقین تو کر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے مانگنا تو نہ آسکا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے پھر بھی مانگی یہ ہی دعا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہ گواہی دے گا میرا خدا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میں نے جب بھی اس سے طلب کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نہیں مانگا کچھ بھی تیرے سوا۔
 
  • Like
Reactions: Guriya_Rani

pErIsH_BoY

Active Member
Jan 28, 2014
287
97
28
Lahore
کچھ قسمیں تم بھی بھول گئے


کچھ وعدے ہم بھی توڑ گئے​


یوں ساتھ بھی کب تک چلتے تم​


اک موڑ پہ آکے چھوڑ گئے​


سب رستے دھندلے رستے ہیں​


پر اب بھی ہم اس موڑ پہ کھڑے​


خالی دل خالی جان لئے​



ہم آج بھی تم کو تکتے ہیں
 
  • Like
Reactions: Guriya_Rani

pErIsH_BoY

Active Member
Jan 28, 2014
287
97
28
Lahore
میرے اندر خاموشی بولتی ہے.................................................. ...........

تیری ہمرہی میں بھی
میں وصال لمحوں کو
رات دن ترستی ہوں
اپنے دل کی سب باتیں
پہلے بھی تو میں اپنی
خِلوتوں سے کرتی تھی
اب بھی چادرِ شب کو
رازداں بناتی ہوں
اے میرے رفیقِ جاں
کیسے میں کہوں تجھ سے
تیری ہمرہی میں بھی
وصل آشنا لمحے
ہجر آشنا سے ہیں
سانس سانس میں میری
ایک بے بسی سی ہے
( کیا عجب کمی سی ہے )
بیکراں سی تنہائی
کے یہ سلسلے آخر
کب تلک سنبھالوں گی؟
تیری ہمرہی میں بھی
اجنبی فضائیں ہیں
خود سے تیرے لہجے میں
گفتگو بھی کرتی ہوں
پر میرا ادھورا پن
میرے ساتھ رہتا ہے
( ختم ہی نہیں ہوتا )
تیرے پیار کے جگنو
ہاتھ ہی نہیں آتے
 
  • Like
Reactions: Guriya_Rani

pErIsH_BoY

Active Member
Jan 28, 2014
287
97
28
Lahore
*******************

سوال غم ہے
جواب غم ہے
ہزار سالوں میں جو مکمل ہوئی
محبت کی خون رنگی کتاب غم ہے
تمہارے لب پہ جو مسکراہٹ ہے
میرے لب پہ جو آشنائی کی منزلوں کا سفر لکھا ہے
یہ سارا غم ہے
کسی کے تن کی سندرتا غم ہے
کسی نظر کی گُنجلتا غم ہے
محبتوں کے سمندروں میں
اُترتی خوش رنگ سیڑھیوں پر
یہ لڑکیوں کی قطار غم ہے
کفن میں لپٹی دُلہن کی آنکھوں میں
آنسوؤں کا شمار غم ہے
وہ لڑکیاں، لڑکے، عورتیں، مرد غم ہی غم ہیں
جو میری نظموں کے جنگلوں کے
بے سمت رستوں پہ کھو گئے ہیں
وہ سالخوردہ حسین عورت بھی غم کا چہرہ بنی ہوئی ہے
جسے محبت نے روشنی کی نوید دی تھی
وہ جس نے وعدوں سے اپنی منزل کشید کی تھی
وہ گاؤں کی کچی پکی راہیں
وہ میری ماں کی نحیف بانہیں بھی غم ہی غم تھیں
کہ میرا بچپن تو غم کے لمبے سفر کی
غمگین ابتدا تھی
جوانی غم کی کہانی بن کر
کچھ ایسے لفظوں میں ڈھل گئی ہے
کہ غم کی تشہیر ہو گئی ہے
ابھی ابھی یہ جو شوخ سائے
حسین لمحوں کو چن رہے تھے
یہ غم کی تاریخ بن رہے تھے
یہ فلسفہ عقل و عشق و عرفاں
مجاز، اعجاز اور حقیقت بھی سارے غم ہیں
میں ایک شاعر
میں ایک ساحر
میں آگہی کے عذاب میں گُم
سفر کا انجام جانتا ہوں
میں مانتا ہوں
کہ ہر خوشی کا امام غم ہے
.
.​
.
تمام غم ہے



*******************
 
  • Like
Reactions: Guriya_Rani

pErIsH_BoY

Active Member
Jan 28, 2014
287
97
28
Lahore
محبّت میں اگر کوئی جھوٹ بولے تو
محبّت روٹھہ جاتی ہے
محبّت ٹوٹ جاتی ہے
محبّت میں اداکاری نہیں چلتی
محبّت میں *ریا کاری نہیں چلتی
محبّت سچّے جذبوں سے بنا انمول موتی ہے
محبّت زندگی میں فقط اک بار ہوتی ہے
محبّت کانچ کی مانند
محبّت آنچ کی مانند
کہ جوں جوں وقت گزرے تو
یہ ہر پل تیز ہوتی ہے
سلگتی آگ کی مانند
محبّت راگ کی مانند
کہ اس کے سننے والوں پر
عجب مدہوشی چھاتی ہے
محبّت جھلملاتی ہے
چمکتے چاند کی مانند
محبّت ایک مورت ہے
محبّت خوبصورت ہے
یہ مورت سب کو بھاتی ہے
کئی سجدے کراتی ہے
محبّت ریل کی مانند
کہ انجانے مسافر اس کی ہر پل
راہ تکتے ہیں
یہ بس اک بار آتی ہے
اگر یہ چھوٹ جائے تو
مسافر سوگ کرتے ہیں
مسافر روگ کرتے ہیں
محبّت جوگ کی مانند
جسے اک بار لگ جائے
وہ سب کچھہ بھول جاتا ہے
محبّت دیوار سے لپٹی اک بیل کی مانند
جو سدا بڑھتی ہی جاتی ہے
محبّت خوشبو کی مانند
جو ہر سو پھیل جاتی ہے
محبّت گنگناتی ہے
سُریلے گیت کے مانند
کسی کے نرم ہونٹوں سے
یہ جب لفظوں کی صورت میں نکلتی ہے
تمنّا پھر مچلتی ہے
محبّت راکھہ ہوتی ہے
محبّت پاک ہوتی ہے
محبّت معصوم سا سچ ہے
کہ اس کو بولنے سے روح میں
پاکیزگی سی لوٹ آتی ہے
تبھی تو! محبّت میں اگر کوئی جھوٹ بولے تو​
!!!!محبّت روٹھہ جاتی ہے
 

pErIsH_BoY

Active Member
Jan 28, 2014
287
97
28
Lahore



اُلجھن

مجھے خوف ہے
وہ نباہ کے کسی مرحلے پہ
یہ آ کے کہہ دے کہ اب نہیں
میرے دل کو تیری طلب نہیں



 
  • Like
Reactions: Guriya_Rani

pErIsH_BoY

Active Member
Jan 28, 2014
287
97
28
Lahore
اِن خوابوں کو روشن کر دو
چھین لو مجھ سے میری سوچیں
میرے ذہن کو بنجر کر دو
میری آنکھیں پتھر کر دو
گر چاہو تو
مجھ کو تم دیوانہ کردو
میرے جسم کے صحراؤں میں
پھول کھلاؤ موتی بھر دو
میرے اندھے جیون کو تم
اپنے پیار سے روشن کر دو
اِک لمحے کو تم بھی سوچو
میرے خواب ادھُورے ہیں جو​
اِن خوابوں کو روشن کر دو
 

pErIsH_BoY

Active Member
Jan 28, 2014
287
97
28
Lahore
خوشحال سے تُم بھی لگتے ہو

یوں افسردہ تو ہم بھی نہیں

پر جاننے والے جانتے ہیں

خوش تم بھی نہیں خوش ہم بھی نہیں

تم اپنی خودی کے پہرے میں

ہم اپنے زعم کے نرغے میں

انا ہاتھ ہمارے پکڑے ہوئے

اک مدت سے غلطاں پیچاں

ہم اپنے آپ سے الجھے ہوئے

پچھتاوں کے انگاروں میں

محصورِ تلاطم آج بھی ہیں

گو تم نے کنارے ڈھونڈ لیئے

طوفاں سے سنبھلے ہم بھی نہیں

کہنے کو سہارے ڈھونڈ لیئے

خاموش سے تم، ہم مہر بہ لَب

جگ بیت گئے ٹُک بات کیئے

سنو کھیل ادھورا چھوڑتے ہیں

بِنا چال چلے بِنا مات دیئے

جو چلتے چلتے تھک جایئں

وہ سائے رک بھی سکتے ہیں

چلو توڑو قسم اقرار کریں

ہم دونوں جھک بھی سکتے ہیں
خلیل اللہ فاروقی
 

pErIsH_BoY

Active Member
Jan 28, 2014
287
97
28
Lahore
بہت ہی مصروف زندگی میں

مشہور و معروف زندگی میں

خوشی سے بھرپور ساعتوں میں

ہزار طرح کی راحتوں میں

بدن میں گھلتی رفاقتوں میں

وصال آمادہ خلوتوں سے

بہت ہی ہولے سے چوری چپکے

ہر ایک رشتے سے بچ کے کٹ کے

کسی بھی بے سمت سے سفر پر

کسی بھی انجان رہگزر پر

میں چلتے چلتے یہ سوچتا ہوں

کہ ساری دنیا یہ جانتی ہے

بہت حسین میری زندگی ہے

مگر کسی کو میں کیا بتاؤں؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟؟

ہر ایک شے ہے وہی نہیں ہے
خلیل اللہ فاروقی​
 

pErIsH_BoY

Active Member
Jan 28, 2014
287
97
28
Lahore
دسمبر

مجھ سے پوچھتے ہیں لوگ
کس لئیے دسمبر میں
یوں اداس رہتا ہوں
کوئی دکھ چھپاتا ہوں
یا کسی کے جانے کا
سوگ میں مناتا ہوں


آپ میرے البم کا
صفحہ صفحہ دیکھیں* گے
آئیے دکھاتا ہوں
ضبط آزماتا ہوں


سردیوں کے موسم میں
گرم گرم کافی کے
چھوٹے چھوٹے سپ لے کر
کوئی مجھ سے کہتا تھا
ہائے اس دسمبر میں
کس بلا کی سردی ہے
کتنا ٹھنڈا موسم ہے
کتنی یخ ہوائیں ہیں


آپ بھی عجب شے ہیں
اتنی سخت سردی میں
ہو کے اتنے بے پروا
جینز اور ٹی شرٹ میں
کس مزے سے پھرتے ہیں


شال بھی مجھے دے دی
کوٹ بھی اڑھا ڈالا


پھر بھی کانپتی ہوں میں

چلئیے اب شرافت سے
پہن لیجئے سویٹر
آپ کے لئیے میں* نے
بن لیا تھا دو دن میں


کتنا مان تھا اس کو
میری اپنی چاہت پر


اب بھی ہر دسمبر میں
اسکی یاد آتی ہے


گرم گرم کافی کے
چھوٹے چھوٹے سپ لے کر
ہاتھ گال پر رکھے
حیرت و تعجب سے
مجھ کو دیکھتی رہتی
اور مسکرا دیتی


شوخ و سرد لہجے میں
مجھ سے پھر وہ کہتی تھی
اتنے سرد موسم میں
آدھی سلیوز کی ٹی شرٹ!ٓ
اس قدر نہ اترائیں
سیدھے سیدھے گھر جائیں
اب کی بار جب آئیں
براؤن ٹراؤزر کے ساتھ
بلیک ہائی نیک پہنیں
کوٹ کوئی ڈھنگ سا لے لیں
ورنہ میں* قسم سے پھر ایسے روٹھ جاؤں* گی
سامنے نہ آؤں گی
ڈھونٹتے ہی رہئیے گا
پاس بیٹھے ابّو کے
پالٹیکس پر کیجئے گرم گرم ڈسکشن
کافی لے کے کمرے مِیں مَیں تو پھر نہ آؤں* گی
خالی خالی نظروں* سے آپ ان خلاؤں* میں
یوں ہی تکتے رہئیے گا
اور بے خیالی پر ڈانٹ کھاتے رہئیے گا


کتنی مختلف تھی وہ
سب سے منفرد تھی وہ
اپنی ایک لغزش سے
میں نے کھو دیا اسکو


اب بھی ہر دسمبر میں
اسکی یاد آتی ہے

خلیل اللہ فاروقی
 

pErIsH_BoY

Active Member
Jan 28, 2014
287
97
28
Lahore

یادوں کی راکھ

میرا کل، میرا ماضی ہے
اس ماضی کی کچھ یادیں ہیں
اس ماضی کی تحریریں ہیں
اور ڈھیر سی تصویریں ہیں
یہ ماضی مجھے جینے نہیں دیتا
کچھ آگے چلنے نہیں دیتا
اسی لئے میں سوچتا ہوں
کیوں نہ ان یادوں کا آج
ڈھیر لگا کر
تحریریں، تصوریں جلا کر
اور ان کی پھر راکھ بنا کر
کھڑکی کھول کے، تیز ہوا میں
راکھ یہ آج، اُڑا دیتا ہوں
دل سے تجھے بُھلا دیتا ہوں
 

pErIsH_BoY

Active Member
Jan 28, 2014
287
97
28
Lahore
زندگی کی راہوں میں

بار ہا یہ دیکھا ہے

صرف سُن نہیں رکھا

خود بھی آزمایا ہے

جو بھی پڑھتے آئے ہیں

اسکو ٹھیک پایا ہے

اسطرح کی باتوں میں

منزلوں سے پہلے ہی

ساتھ چھوٹ جاتے ہیں

لوگ روٹھ جاتے ہیں

یہ تمہیں بتا دوں میں

چاہتوں کے رشتوں میں

پھر گرہ نہیں لگتی

لگ بھی جائے تو اُس میں

وہ کشش نہیں رہتی

ایک پھیکا پھیکا سا رابطہ تو رہتا ہے

تازگی نہیں رہتی

۔۔۔ روح کے تعلق میں

زندگی نہیں رہتی ۔۔۔

بات پھر نہیں بنتی

لاکھ بار مل کر بھی

دل کبھی نہیں ملتے!

ذہن کے جھروکوں میں

سوچ کے دریچوں میں

تتلیوں کے رنگوں میں

پھول پھر نہیں کھلتے
!
اس لئیے میں کہتا ہوں


اس طرح کی باتوں میں

احتیاط کرتے ہیں

اسطرح کی باتوں سے اجتناب کرتے ہیں!
 

pErIsH_BoY

Active Member
Jan 28, 2014
287
97
28
Lahore
خوشبو اس چمن سے ہے


جو دن کا رات سے ہے روح کا بدن سے ہے
وہي تعلق خاطر مرا وطن سے ہے
مرے لبوں کا تبسم بھي ہے عطا اس کي
مرے خيال میں خوشبو اسي چمن سے ہے
مرا مقام اگر ہے کوئي تو اس کے سبب
ميرے مقام کہاں ميرے فکر و فن سے ہے
ہے مري ماں، مري چھاں، ميرا سائباں دھرتي
بہت عزيز مجھے اپنے جان و تن سے ہے
کڑي کماں ہے عدو کيلئے نويد ابھي
ڈٹا ہوا سر ميدان بانکپن سے ہے
 
Top
Forgot your password?